In Pictures: We all are Containers Today.


This is my very own city, Islamabad. The city that once used to be full of peace now contains containers of all kinds. The kind of containers vary from size to color to type. For example, you can get Warid Container, Allah hu Akbar Container, not just that but variety also contains imported containers.

The reports of Long March by both Imran Khan and Tahir Ul Qadri brings the glad tidings for the citizens of Islamabad. The government has taken measures to stop the march by putting containers all over.

The containers being prosecuted by the government has raised grave concerns among the containers right organisations all around the world. Ban Ki Container has urged the international community to raise their voices against the on going prosecution being done in Pakistan.

According to initial reports, an estimated 5-10 containers were injured after the crackdown of PAT workers on containers in Lahore. The report also said that Government is handling containers in a very brutal way. TTC (Tehreek e Tahafuz e Containers) have called their workers to demonstrate against the vicious behavior of Government towards Containers. However Pervert Rashid has denied all the allegations and have said that they are paving a way for the already diminishing minority of Containers by giving them public posts.

Mudala Thousafzai has given a joint statement with Something-Bieber that education is basic right of every container, they must not be deprived of it. Nigerian Government must also use the power of containers against the Boko Haram.

Some Containers in Islamabad today are below.

 

_MG_1671
Just Some Cars sick of Containers.
_MG_1656
Brown (Asian) Container


Freshly Baked Containers Arrive.
Freshly Baked Containers Arrive.
Just some ambulances finding a way to dodge containers.
Just some ambulances finding a way to dodge containers.

 

Just some imported Containers.
Just some imported Containers.

 

Containers Couple protesting.
Containers Couple protesting.
Containers pushed to solitude, TSK
Containers pushed to solitude, TSK
Labour Containers
Labour Containers
Brown and White Container
Brown and White Container
Khurshid Fan Container
Khurshid Fan Container
Allah Hu Akbar Container.
Allah Hu Akbar Container.
Warid Container
Warid Container
Useless Containers
Useless Containers

Tarek Phattay has also written an article in Toronto Sun demanding Israel to act against the on going container prosecution in Pakistan.

More developments regarding containers will be updated.

Theorem of Love


Inspired by Dave Feinberg

Image

You weren’t real

You were an imaginary conjugate

Like those holes at light years

Which deviate the path of light rays

For light is a wave

The wave of your hand

That moves me

Like a particle

Around the nucleus

That is you

You were not real

You were an imaginary Conjugate

For every iota

Must there be a real integer

The integer of love

The integer of trust

The integer of ❤

Had there been a smooth road

We would have been a Zener diode

If there was a clipper circuit in our way

We would apply the theorem of Hay

I would read the colors of your face

With the resistance color coding pace

We would be happy as an ideal conductor

There won’t be Eddy currents in our structure

I would become the real number

And you would be my iota

For I will be real

And

You will be my imaginary conjugate.

Confessions of a Fine Evening


Image

Only if you knew
When the breeze of cold hearts hit the shores of warm deserts
When fall will pass
Daffodils will rise

Id scold you
With my careless touch
You would shiver with smile
And the frosting cold nights would end
Dawn will return again

How would you know
It adds a little more than life
It completes
My untouched dreams
When you show up
With your undressed hair
And
Radiant Simper

How would I know
Whats hidden beneath
The delights of your plain face
When you want to question
But you dont

You know My beloved
The tyranny of storms
Wont last long
The rain has stopped
Ever stayed clouds are moving
When the sun rise again
You and I be one again
If and only if you knew.

The Tragedy of Drones


 

And the massacre continues as the US drone strikes fail to stop. However, USA is not the culprit; the real culprits are those in power whose silence is regularly executing deaths in Pakistan. Those who are proud of their eloquent tongues have silenced themselves over drone attacks. In my opinion when a nation keeps quiet about the killings of their own people, they loose their dignity.

2966 people were killed in 9/11 attacks in USA, which pushed USA into the war on terror. The core reason was the security of their people and the dignity of their nation. Today every American is sure that their government trying their best to protect their citizens. Sadly in Pakistan, it seems like the lives of the people are on sale. Nobody cares about whose dying and who’s not. The government has failed miserably to protect human lives.

According to The New America Foundation, 2680 people including 173 children have died in drone attacks in the past eight years, and still many are dying everyday. If you want to know about the price of human blood, ask a mother. The story started when a General reigned over the dejected people of Pakistan. He didn’t commit crime by allowing drone strikes but he gave license of serial killing to a country whose hands are already colors red with the blood of millions, whether it is Japan, Vietnam, Iraq, Afghanistan, Yemen or Pakistan. United States of America has history of killing people for their interests and sadly, they were never brought to justice.

The drone strikes started after the green signal was waved by General, one after another, hundreds of strike till this day, murdering thousands of innocents in collateral damage. The definition of collateral damage is relative; one man’s son can be another man’s collateral damage. The people of Pakistan already have extreme hatred and detestation for American government; it is not far when every American citizen will be hated by Pakistanis or perhaps, it already is. The blame is on the people of power in both countries.

Recently, a drone attack victim, Nabila Rehman, 9 years old whose mother was murdered while she was looking into garden. She traveled thousands of miles to have answer to her only question; was my mother a potential threat to United States of America?. She stated, the only person killed was not a militant, but my mother. Who knows, how many Nabila Rehman’s are already dieing with anger and helplessness in drone affected areas. The question is, till how long would the game of death will dance upon the innocent Pukhtoons.

There might be a purpose which is served by a drone strike. There might be potential threats that are eliminated by a few drone strikes, but the damage it is causing socially and psychologically are far more dangerous than the purpose it serves. The epidemic of “Collateral Damage” will only cause retaliation, the uprising against the murderers who are sitting thousands of miles away playing the game of death with the joystick. The pukhtoons have history of vengeance; they revenge their enemies, in any way, through any way. So if Zubair, 13 years old, the brother of Nabila Rehman, pick up arms against the America, Will then it be justified? A drone might kill one potential threat but leaves many definite threats behind.

USA showed a cold shoulder to tragedy of Nabila Rehman, she has become another nameless face among thousands, while Malala is given the status of an renowned activist because she serves the purpose in American War. Murtuza Hussain points a serious question in his opinion piece, Malala and Nabila: Worlds apart.  “While Malala was feted by Western media figures, politicians and civic leaders for her heroism, Nabila has become simply another one of the millions of nameless, faceless people who have had their lives destroyed over the past decade of American wars. The reason for this glaring discrepancy is obvious. Since Malala was a victim of the Taliban, she, despite her protestations, was seen as a potential tool of political propaganda to be utilised by war advocates. She could be used as the human face of their effort, a symbol of the purported decency of their cause, the type of little girl on behalf of whom the United States and its allies can say they have been unleashing such incredible bloodshed”.

The milk has been spilled, the water has already reached the gates. People of Pakistan had sincere hopes from a Prime Minister who came to power with a vast majority, but he failed to satisfy the concerns of people of Pakistan. There still is time Mr Prime Minister, Think before an even worse time overtakes us. Great nations of the world have faced worse circumstances. China was once under the occupation of Japan, Nazi’s were once outside the gate of Moscow, France was once under a tyrannous monarch. Temporary invasions don’t win wars, Leningrad, Stalingrad was once invaded, but the nations who want to remain free, fight till their last breath. The ignorance of the individuals of this nation is the only reason why Pakistanis are suffering. When the conscience of a nation is asleep, when deaths are ignored just because the person died is not your father, son, mother or daughter, when a ray of hope is lost in the dark seas of bewilderment, nations die.

Tales from a cornered desert.


Once

A radiant cloud lost way

In the warm deserts of dismay

 

Despair he cried with fear

Soon he broke down in tears

A camel passing by asked

 

I heard Arabs say water seeps

When cloud weeps

Shed some rain that you keep

 

Frightened the cloud replied

 

I am pride of Himalayas

I am life for barren lands

I am the heart of poets

I am the dweller of boundless skies

Who are you to ask me questions

 

Smiling, the camel replied

Stand down oh conceited cloud.

 

For my desert has sand dunes not Himalayas

For no tree grows here

The solitude of my abode is beyond poems of poets

Pride and Honor disappear in winds of my abode

 

Upon hearing this

Cloud moved to cactus nearby

Its the sun that makes you shine

but you are ugly and full of spines

 

Cactus calmly replied

I am the light  of desert

For nothing grows here

But me

 

The scorch of sun

Cannot burn me

No Animal can

Touch me.

I am the only glory

I am the only Honor
Not I am known by Deserts

Deserts are known by me.

 

Run away you little monster

Desert is not for you
Either make yourself strong

or Donot Criticize….

ہمیں بھی عشق ہوا تھا


NOTE

نوٹ: املا کی بیشمار غلطیاں نظر اینگی کیوں کے یہ میرا پہلا تجربہ ہے کمپیوٹر پی اردو لکھنے کا اور وہ بھی گوگل ٹرانسلیشن کو استعمال کرتے ہوے ، لہٰذا مضمون پی غور کیجئے گا نہ کے املا پی. شکریہ. 

>

بچپن میں ایک بات سنی تھی “عشق دریا سمندروں ڈونگا” – اس وقت میری ناقص عقل اس فقرے کے اصل معنی سمجھنے سے قاصر تھی.  چونکے عاجز سائنس کا سٹوڈنٹ تھا، اور علم کی بات جاننے کی حس ہمیشہ حرکت میں رہتی تھی تو بندا مجبورن یہ سوچنے لگ گیا کے شاید عشق کسی دریا کا نام ہے جو دنیا کے کسی ایسے کونے میں ہے جہاں صرف خلائی  مخلوق کی رسائی ہے

ہمارے ایک دوست، نام طیّب بابر، چہرے ایسا کے میرے جیسے سخص کے چار چہرے انکے ایک میں سما جایں، جسم کی تو بات چھوڑ ہی دیجیے ، کسی امیر نائی کی دکان پی لگے بڑے سے حمام کی طرح، ایک آنکھ گول اور ایک خاصی چکور، مہ کھولتے تھے تو دریائی گھوڑے کا منظر نظر کے سامنے رقص کرنے لگ جاتا تھا. ایک دن ہمیں فرمانے لگے، یار عثمان، سنا ہے برمودہ ٹرینگل دنیا کی سب سے گہری جگہ ہے. ہم نے زیادہ غور نہیں کیا انکی بات پی کیونکے ہم انکی فضول بات پی دیہان دے کر اپنی قلفی کا مزہ خراب نہیں کرنا چاہتے تھے، لیکن قلفی ختم ہونے کے بعد ہم ایک عجیب اضطراب کا شکار ہوگے. یہ عشق کا ع اور عشق کا ق تو کل پرسوں کی باتیں ہیں، ہم تو بہت پہلے سے اس کھوج میں تھے کے عشق زیادہ “ڈونگا” ہے یا برمودہ ٹرینگل.

خیر جوں توں کر کے تھوڑے بڑے ہوے، ہوش سمبھالا، چڑھتی جوانی کے ساتھ فلمیں دیکھنے کا شوق در آیا تو معلم ہوا کے اچھا عشق تو پیار محبّت کو کہتے ہیں، اور یہ بیماری تو خسرے کی طرح عام ہے، فرق صرف اتنا ہے کے خسرہ بچپن میں ہوتا ہے اور عشق جوانی میں، خسرہ آپکے جسم پی نشان چھوڑتا ہے، عشق کبھی کبھی روح کو جنھوڑ کے رکھ دیتا ہے، مگر تاثیر دونوں کی ایک سی ہی ہے.

ہمارے زمانے میں لوگوں کے گٹر میں گرنے کا رواج عروج پی تھا، ہر دوسرے دن کسی دوست کی گٹر میں گرنے کی خبر عام ہوتی تھی کیوں کے ہمارے ملک میں گٹروں پی ڈھکن لگانا توہین سمجھا جاتا ہے اور الله میاں سے تو بچپن سے ہے عاجز کے خاص روابط تھے. انہوں نے کبھی مایوس نہیں کیا مسلاّ ایک بار خبر ملی کے فلانا دوست گٹر میں گر گیا، اگلے دن اسکول میں ایک گندے تالاب کے کنارے کھڑے ہو کے ہم سوچ رہے تھے کے اس گند میں گر کے کیسا محسوس ہوتا ہوگا، بس یہ سوچنا تھا کے کسی نے شرارتاً ہمیں دھکا دے دیا اور ہم سیدھا گندگی کے ڈھیر میں جا گرے، ہمیں یہ تو نہیں پتا ہمارے دوست نے کیا سوچا تھا گرنے کے بعد مگر ہماری عقل جواب دے گئی تھی، بدبو ایسی کے تانسن کے سر اکھڑ جایں، سورج نڈھال ہوجائی، بادل اگ برسنے لگیں . الله الله کر کے کسی نے ہمیں نکالا. یہاں تک تو ٹھیک تھا مگر رنج و غم کی کیفیت شدید تب ہوئی جب اسی حالت میں لڑکیوں سے بھری بس میں گھر تک سفرکیا . گھر پہنچے تو والدہ قریب نہ آیں.بدبو

کی ہو چاروں طرف پھیل چکی تھی، والد صاحب جو خود غسل خانے میں تھے، باہر آ کر پوچھنے  لگے کے یہ بدبو کہاں سے آرہی ہے. اسی طرح ایک دن خیال آیا کے جن لوگوں کا ایکسیڈنٹ ہوتا ہے ان کو کیسا محسوس ہوتا ہے، انہی دنوں ہم نے نیی نویلی سائیکل لی تھی، جو ہمارے لئے کوکاف کی پری سے کم نہ تھی، اس پی یہ کے نیا نیا چالیس روپے کا باجا بھی لگوایا تھا جو کوئی بیس کسم کے راگ بجاتا تھا.  اسلام آباد کی پر فضا گلیوں میں ہماری سائیکل ناچتی گاتی لہراتی جاتی تھی. بس ہمیں ایکسیڈنٹ کا خیال انے کی دیر تھی کے ادھر والدہ کو خیال آیا کے گھر میں انار دانا ختم ہوگیا ہے، سو ہمیں حکم دیا کے بازار سے خرید لاؤں. ہم بڑے شوق سے اپنی پری کو رقص کرواتے ابھی گھر کے گیٹ سے باہر ہی  ہوے تھے کے ایک کار کی ٹکر سے نہ صرف ہم زمین بوس ہوے، بلکے وہ تمام ارمان جو ہم نے پری سے مطلق دل میں بسا رکھے تھے، وہ بھی زمین بوس ہوگے. گرنے کے بعد جب پری پی نظر ڈالی تو اسکا کیریئر ہوا میں پنگ پانگ کی گیند کی طرح جھول رہا تھا اور پہیہ خلافت عثمانیہ کے برسغیر کا نقشہ پیش کر رہا تھا ,کچھ سمجھ نہ ائی تو ہم نے رونا شروع کردیا، کار ولا تو فرار ہوچکا تھا مگر ایک لمحے میں ہمارے تمام خواب و ارمان چکنا چور کر گیا تھا.

الله میاں نے جیسے ہمیں پہلے کبھی مایوس نہ کیا تھا تو اب مایوس کرنے کا تو سوال ہے پیدا نہیں ہوتا، بس بدقسمتی یہ کے ایک دن نجانے ذہن کے کس بیکار کونے میں یہ خیال آگیا کے جن کو عشق ہوتا ہے، انکو کیسا محسوس ہوتا ہوگا…

پھر ایک دن الله کی طرف سے “اس” سے ملاقات کا موقع بن گیا. ملاقات سے پہلے تک تو صرف بات عام سی دوستی تک تھی لیکن ملاقات کے بعد دل کے صحرا میں مدّتوں خشک سالی کے بعد جیسے کھل کے ابر برسا ہو. جب اس پی پہلی نگاہ پر تو ایسے معلم ہوا جیسے دنیا جہاں کے سب کیڑے مکوڑے میرے جسم پر رینگنے لگ گئے ہوں، حلق خشک، زبان پی فرونی دور کا وہ تالا لگ گیا جسکی چابی خود فروں نے دریا نیل میں بہا دی تھی. کانوں میں ہما وقت ہزاروں ڈرل مشینوں کی آواز گونجنے لگی. ارے بھیا یہ کیا ہوا، ابھی تو ہم پوری طرح بالغ بھی نہیں ہوے، یا الله یہ کیا ماجرا ہے, محترمہ ہماری حالت زار دیکھ کر یہ سمجھیں کے شاید ہمارا آخری وقت آن پہنچا ہے اور سچ تو یہ ہے کے ہم نے بھی دل میں قلمہ پڑھ لیا  تھا.

الله الله کر کے تھوڑی دیر بعد ہمارے اوسان بحال ہوے تو ایک عام شکل و صورت کی خاتون میرے سامنے موجود تھیں، مگر نجانے کیوں مجھے کوکاف کی پری سے بھی زیادہ خوبصورت لگ رہیں تھیں. کچھ دیر ان کے ساتھ گزرنے کے بعد ہم نے راہ فرار میں ہے غنیمت جانی مگر دل شاید ادھر ہے چھوڑ آے

گھر پہنچتے ہے پہلا کام یہ کیا کے اذان کا بیتابی سے انتظار کیا. نماز پڑھے ویسے بھی صدیاں بیت چکی تھیں مگر اس دن نجانے کیوں دل کیا کے آج تو الله میاں سے دو دو ہاتھ ہو ہی جایں. اذان ہوئی، وضو کیا اور مسجد روانہ ہوگے. گھر سے صرف دو منٹ کی مسافت پی مسجد تھی مگر محسوس ایسا ہو رہا تھا جیسے پیدل کراچی کے سفر کو نکل پڑے ہیں

نماز کی ادائیگی کے بعد مسجد کے ایک کونے میں مراقبے کی حالت میں بیٹھ گئے. کچھ دیر سوچنے کے بعد عرض کی

یا الله جیسے تجھے حوا سے محبّت تھی، مجھے یقین ہے تجھے ویسے ہی حوا کی بیٹی سے بھی محبّت ہوگی لیکن ستم ظریفی یہ ہے کے مجھے بھی حوا کی بہت ساری بیٹیوں میں سے ایک سے محبّت ہوگی ہے.

“حکم ہوا “تو ہم کیا کریں

“بڑے احترم سے عرض کی، “تو نے ہی تو کرنا ہے جو کرنا ہے

“فرمایا “اچھا تو ایک لڑکی کی محبّت تجھے ہمارے در تک لے ہی آی

ہمّت باندھ کے بڑی چالاکی سے جواب دیا “دیکھ الله میاں، یقین کر یاد تو پہلے بھی بہت اتا تھا، مگر ذاتی مصروفیت اتنی تھی کے وقت ہے نہیں ملتا تھا، اب ذاتی مصروفیت بھی میری پیدا کردہ تو نہیں ہیں نہ، تو ہے دن رات

“کو چلاتا ہے، تو ہے سب کا ملک ہے، مصروفیت بھی تیری دی ہی ہے ہیں

فرمایا “تو گویا ایک لڑکی نے تجھے تیری ساری مصروفیت بھلا دیں، اور تو

“ہمارے پاس چلا آیا

“پھر پوچھا  “کبھی نماز پڑھنے کا خیال دل پی گزرا؟

“جواب دیا “نہیں

“پھر حکم ہوا “کبھی رمضان کے علاوہ روزہ رکھا؟

“میں ڈر کے جواب دیتا ہوں “نہیں

“فرمایا “کسی بھوکے کو کھانا کھلایا؟

“جواب دیتا ہوں “نہیں

“فرمایا “کسی یتیم کے سر پی ہاتھ رکھا؟

“جواب دیتا ہوں “نہیں

“مسکراے اور فرمایا “کیا چاہتا ہے

“میں بڑی بے شرمی سے جواب دیتا ہوں “اس لڑکی کو

“حکم ہوتا ہے “بڑا بے شرم ہے تو، چل یہ بتا تجھے پسند کیا آیا

میں جواب دیتا ہوں “حضور اگر تیری بنائی ہوئی ایک مخلوق دوسری کو

“پسند آگئی تو کیا برائی ہے

“فرماتے ہیں “وہ ہمیشہ رہیگی یا میں؟

“میں جواب دیتا ہوں، “ظاہر ہے تو رہیگا

دل میں خیال گزرا کے یہ تو نا ہی ہوگی.

فرمایا “گو کے میں جانتا ہوں مگر یہ پہلی بار تو نہیں کے تو اسی مقصد کے

“لئے آیا ہو

“میں ڈر کے جواب دیتا ہوں “جی ہاں، پہلی بار تو نہیں….

“حکم ہوتا ہے “گویا بندے میں استقامت کی بھی کمی ہے

میں کہتا ہوں “اب جو بھی ہوں، جیسے بھی ہوں، ہوں تو تیرا بندا ہے، میں

“۔نے کدھر جانا ہے، کدھر سے مانگنا ہے سواے تیرے

جواب اتا ہے “اچھا اچھا ٹھیک ہے، دیکھیںگے سوچینگے، اور یاد رکھ، کوئی قابل ہو تو ہم اسکی مانگ اسی وقت پوری کردیتے ہیں، قابل نہ ہو تو اسکو پہلے قابل بناتے ہیں، مگر مانگ کسی کی رد نہیں کرتے، تو ٹھہرا جھوٹا اور مکار، تیری ہم رگ رگ سے واقف ہیں، تو آج اسکا ہے تو کل کسی کا ہوگا ،کیا ہم تجے نہیں جانتے؟ جا اب چلا جا، ہم نے سن لیا ہے تجھے، تیری

“بات سن لی ہے

میں الله میاں سے ڈانٹ سن کے گھر کی طرف دور لگا دیتا ہوں، اور جو تھوڑی بہت امید تھی، وہ بھی ٹوٹ جاتی ہے.

خیر اپنی ذاتی زندگی کو بلائے طاق رکھتے ہوے قصّہ مختصر یہ کے اس کے بعد جو کچھ ہوا اس میں پورا ہاتھ ہماری آنا اور بیوقوفی کا تھا. کبھی کبھی خیال گزرتا ہے کے الله میاں نے تو اپنی پوری کوشش کرلی مجھے سمجھدار بنانے کی مگر ہم نے بھی اتنی ہے کوشش کی کے کہیں ہم سمجھدار نہ ہوجاییں. کسی کے ہونے نہ ہونے سے زیادہ فرق تو نہیں پڑتا بس یہ ہے کے جیسے کسی بیمار سخص کی پیشانی پی کسی مسیحا کا ہاتھ لگ جائے، کسی گلاب کے مرجھانے سے پہلے اسکی خوشبو سے کوئی اسیر ہوجائی، کسی پیاسے پرندے کو صحرا میں تالاب مل جائے،

کسی قیدی کو تختہ دار سے پہلے جنّت کی بشارت مل جائے، کسی کا وقت آسان ہوجاے تو کسی کی آرزو تمام ہوجاے، بس کچھ زیادہ فرق تو نہیں پڑتا، بس اتنا کے جیسے کسی اداس شام میں ٹھنڈی ہوا کا جھونکا سینے کے پار ہوجاے، قحط سالی میں ابر جم کر برس پڑے، فقط اتنا سا فرق، صرف اتنا…

البتہ یہ ہے کے الله میاں جیسا پہلے تھا، ویسا ہے آج بھی ہے، اور ابھی بھی مایوس نہیں ہونے دیتا.

Mere Hamdum Mere Dost (Translation)


This is my one of the favorite Ghazal from Faiz Ahmed Faiz.

And this is my amateur attempt to translate it into English.

There is no way I can ever reach the essence of this poetry which Faiz meant but yet since because of extreme  likeness for this Ghazal, I thought to translate it. Translation is metaphoric.

گر مجھے اس کا یقین ھو مرے ھمدم مرے دوست

گر مجھے اس کا یقین ھو کہ ِترے دل کی تھکن

If I were sure about you my companion my friend

If I knew debilitation of your desolated heart

تیری آنکھوں کی اداسی ، ترے سینے کی جلن

میری دل جوئی ، مرے پیار سے مٹ جائے گی

Melancholy of your eyes, agony of your soul

Will rest with my care

گر مرا حرفِ تسلّی وہ دوا ھو جس سے

جی اٹھے پھر ترا اجڑا ھوا بے نور دماغ

If my redemptive words can

rejuvenate your abandoned mind

تیری پیشانی سے دھل جائیں یہ تذلیل کے داغ

تیری بیمار جوانی کو شفا ھو جائے

If they can wash away the marks of humiliation

I pray, your dejected youth resuscitates

گر مجھے اس کا یقین ھو مرے ھمدم ، مرے دوست

روز و شب ، شام و سحر میں تجھے بہلاتا رھوں میں

If I were sure about it my companion, my friend
I  would comfort you each day and night

میں تجھے گیت سناتا رھوں ھلکے ، شیریں

آبشاروں کے بہاروں کے ، چمن زاروں کے گیت

گیت آمدِ صبح کے ، مہتاب کے ، سیّاروں کے گیت

With Sweet Ballads of dancing waterfalls

tinkling springs,and bloming gardens

With ballads of unveiling morning, sun and planets.

تجھ سے میں حسن و محبت کی حکایات کہوں

کیسے مغرور حسیناؤں کے برفاب سے جسم

گرم ھاتھوں کی حرارت میں پگھل جاتے ھیں

I would read to you, the mysteries of beauty and love

How icy blue souls of arrogant fairies

melt with the warmth of beloved hands

کیسے اک چہرے کے ٹھہرے ھوئے مانوس نقوش

دیکھتے دیکھتے یک لخت بدل جاتے ھیں

How impressions of familiar faces

Change in a blink of moments.

کس طرح عارضِ محبوب کا شفّاف بلور

یک بیک بادہِ احمر سے دہک جاتا ھے

How the pure crystal of beloved’s instinct

is aflame by red spirits.

کیسے گلچیں کے لئے جھکتی ھے خود شاخِ گلاب

کس طرح رات کا ایوان مہک جاتا ھے

How limp of rose bends itself for Nightingale

How fragrance disperse in alienated nights

یونہی گاتا رھوں ، گاتا رھوں تیری خاطر

گیت ُبنتا رھوں، بیٹھا رھوں تیری خاطر 

The pace of my song may never end
Lest I continue to sing for you

پر مرے گیت ترے دکھ کا ُمداوا ھی نہیں

نغمہ جرّاح نہیں، مونس و غم خوار سہی

I know my songs are not compensation for your grieves
These ballads wont redeem you from sorrows

 گیت نشتر تو نہیں ، مرھم ِ آزار سہی

 تیرے آزار کا چارہ نہیں، نشتر کے سوا

My Ballads are not lancet for your pain,but let them be ointment
Only flem is a solution to your agony

اور یہ سفّاک مسیحا مرے قضے میں نہیں

اس جہاں کے کسی ذی روح کے قبضے میں نہیں

ھاں مگر تیرے سوا ، تیرے سوا ، تیرے سوا

That ferocious liberator is not in my reach
Not in reach of any soul in this locality

But with yourself, yourself and yourself.

فیض